میرے احمد آباد روڈ کے دونوں ٹھکیدارگھروں کو لوٹ گئے

پنڈدادنخان( ملک ظہیر اعوان)میرے احمد آباد روڈ کے دونوں ٹھکیدارگھروں کو لوٹ گئے روزنامہ اوصاف میں خبر کی اشاعت کے بعد تھرتھلی مچ گئی کی چہتے خبر کو غلط ثابت کرنے کے لیے میدان میں اتر آئے جبکہ پی ڈبلیو ڈی کے حکام بھی موقع پر پہنچ گئے انہوں نے پلیو ں کے نیچے ڈالی گئی کنکریٹ چیک کی پلیوں کی دیواروں کی پیمائش کی گئی اور روڈ پر ڈالی گئی بجری کی بھی پیمائش کی دونوں بڑے ٹھیکیداروں نے پلیوں اور کازوے کے کام دیگر چھوٹے ٹھیکداروں کو دیے جس سے سارا کام سست روی کا شکار ہو گیا اور انہوں نے بھی کام بند کر دیا روزنامہ اوصاف میں خبر کی اشاعت کے دس گھنٹوں کے بعد مغرب کے وقت کوٹلہ سیداں اور ملیار کے درمیان والے کازوے پر کام شروع کر دیا گیا جبکہ دیگر تمام چھوٹی پلیاں ابھی نامکمل پڑی ہیں جن پلیوں پر لنٹل ڈالا جا چکا ہے ان کے ارد گرد صحیح طریقہ سے مٹی نہیں ڈالی گئی جس کی وجہ سے ٹریفک کی روانی میں سخت خلل پڑتا ہے جو پلیاں زیر تعمیر ہیں ان کے متبادل راستے صحیح طریقے سے نہیں بنائے گئے بارش کے باعث وہاں سے گاڑیاں گزر نہیں سکتیچھوٹے ٹھیکیداروں کی سستی اور کاہلی کی وجہ سے دو نوجوان موٹر سائیکل سے گر کر شدید زخمی ہو چکے ہیں تاہم پی ڈبلیو ڈی اسلام آباد کے ٹھیکیداروں کا یہاں نام و نشان تک نہیں اور نہ ہی ان کی مشینری موجود ہے تقریبا آٹھ کلومیٹر لمبی روڈ جس پر 10کروڑ سے زائد رقم خرچ ہونی ہے اس کو کار پیٹیڈ کرنے کی فی الحال کوئی تیاری دکھائی نہیں دے رہی احمدآباد اوورفلائی کی دونوں جانب جو کہ میرے احمد آباد ضلع کونسل روڈ جہلم کا حصہ ہے اسے مکمل طور پر چھوڑ دیا گیا ہے جو کہ ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہے اس حصہ کی تعمیر بھی اشد ضروری ہے