رمضان المبارک میں دودھ اور ڈیری مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ

جہلم(چوہدری عابد محمود +چوہدری ظفرنور)جہلم رمضان المبارک میں دودھ اور ڈیری مصنوعات کی قیمتیں بھی آپے سے باہرشہری سخت ذہنی اذیت کا شکار ، عوامی حلقوں نے ڈپٹی کمشنر سے نوٹس لینے کا مطالبہ کر دیا ۔ تفصیلات کے مطابق جہلم شہر و گردونواح میں دودھ ، دہی اور اس سے دیگر تیار ہونیوالی مصنوعات انسانی جسم کی نشوونما کے لئے انتہائی اہمیت کی حامل ہوتی ہیں ، وہیں دودھ اور دیگر مصنوعات کی قیمتوں میں آئے روز اضافے سے غریب طبقہ کے لئے ان کو خرید نا انتہائی دشوار ہوچکا ہے،رمضان المبارک کے بابرکت مہینے میں دیہاتی علاقوں سے شہر کے عوام کو دودھ سپلائی کرنے والے گوالے 100 سے110 روپے فی کلو کے حساب سے فروخت کرکے حالات کے ستائے شہریوں کی جیبوں پر کھلم کھلا ڈاکہ ڈال رہے ہیں جبکہ شہر کے ہوٹلوں پر فراہم کیا جانے والا دودھ بھی مبینہ طور پر مضر صحت ہونے کیوجہ سے انسانی زندگیوں کو شدید خطرات لاحق ہو چکے ہیں ۔ دیہات سے دودھ لیکر آنے والے گوالوں کا جائزہ لیا جائے تو وہ دودھ کو دودھ فروشوں کی دکانوں پر لے جا کر اس کی کریم نکلوالیتے ہیں جس سے دودھ کی افادیت ختم ہو کررہ جاتی ہے ، ناقص و غیر معیاری دودھ شہریوں کو مہنگے داموں فروخت کر کے ان سے من پسند کے نرخ وصول کئے جار ہے ہیں ، مضر صحت دودھ کی سپلائی اور مہنگے داموں فروخت کو روکنے کے لئے شہریوں نے متعدد بار قانون نافذ کرنے والے اداروں تک آواز پہنچانے کی کوشش کی لیکن ضلعی انتظامیہ کے کانوں پر جوں تک نہیں رینگی ، بے بسی کی تصویر بنی غریب عوام قدرت خداوندی کی اس عظیم نعمت سے محروم نظر آتی دکھائی دیتی ہے ۔ شہری تنظیموں کے عہدیداروں سمیت عوامی حلقوں نے ڈپٹی کمشنر جہلم ، ڈسٹرکٹ فوڈ اتھارٹی جہلم کے ذمہ داران سے نوٹس لینے اور کارروائی کرنے کا مطالبہ کیا ہے ۔