18 سالہ بیٹے کو قتل کیاگیا،انصاف چائیے۔ محمد اعظم ولد محمد مسلم قوم انصاری

دینہ (رضوان سیٹھی سے) دینہ میں 18سالہ نوجوان قتل، میرے بیٹے کو نامعلوم وجو ہات پر نامعلوم افراد نے قتل کیا ہے مجھے انصاف چاہئے، مقتول کے والد محمد اعظم نے پولیس کو بیان، پولیس تھانہ دینہ نے مقدمہ درج کر کے تفتیش شروع کر دی۔ تفصیلات کے مطابق گزشتہ روز محمد اعظم ولد محمد مسلم قوم انصاری ساکن گلی پٹواریاں دینہ نے پولیس کو مقدمہ درج کرواتے ہوئے کہا کہ میں تین چار سال سے ریڑھی لگارہاہوں میرابیٹا محتشم علی عمر 18سال تقریباً ایک سال سے شفیق ٹریڈرز مین بازار پر کام کر رہا تھا گزشتہ روز میرا بیٹا حسب معمول اپنے گھر سے کام کے سلسلہ میں شفیق ٹریڈرز پر گیا اور میں اپنے کام پر منگلا روڈ دینہ چلا گیا سوا چار بجے کے قریب ایک آدمی محمد جمیل میرے پاس آیاا ور اطلاع دی کہ آپ کے بیٹے محتشم علی کی طعبیت خراب ہے آپ جلدی سے میرے ساتھ دوکان پر چلو میں دوڑتے ہوئے شفیق ٹریڈرز پر پہنچا تو دیکھا کہ میرا بیٹا کرسی کے اوپر بے ہوشی کی حالت میں پڑا ہوا تھا اس وقت دوکان کے کاؤنٹر پر عزیز شفیق ساکن قائد اعظم ٹاؤن جبکہ عاطف محمود سکنہ محلہ شیخاں اوپر گودام میں موجود تھا میں پسرم کو اٹھا کر کلینک لے گیا جہاں ڈاکٹر صاحب نے بتایا کہ گلے پر پھندے کا نشان ہے میرے بیٹے کو نامعلوم وجوہات پر نامعلوم افراد نے قتل کیا ہے تاہم مجھے عزیز شفیق اور عاطف محمود پر شبہ ہے استدا ہے کہ قانونی کاروائی کرتے ہوئے داد رسی کی جائے۔ بعد ازاں پولیس کی بھاری نفری موقع پر پہنچ گئی اور لاش کو پوسٹمارٹم کے لئے ڈسٹرکٹ ہیڈ کواٹر ہسپتال جہلم ریفر کیا، پوسٹمارٹم کے بعد پولیس نے لاش کو ورثا کے حوالے کر دیا اور مقدمہ درج کر کے تفتیش شروع کر دی، ایس ایچ او تھانہ دینہ مرزا وقاص نے کہا کہ سی سی ٹی وی کیمرے قبضہ میں لے لئے گئے بہت جلد اصل حقائق سامنے آجائیں گے، کسی کے ساتھ زیادتی نہیں ہو گی۔